جمعرات, 05 اگست 2021

تازه‌ ترین عناوین

آمار سایت

مہمان
53
مضامین
467
ویب روابط
6
مضامین منظر کے معائنے
603111
comintour.net
stroidom-shop.ru
obystroy.com
лапароскопия паховой грыжи

 

حال و هوای حرم حضرت «فاطمه معصومه سلام الله علیها» در شب وفات ایشان

حضرت فاطمہ زہراسلام اللہ علیہاکی مبارک نسل سے فاطمہ نامی ایک پر برکت بیٹی ہیں جو معصومہ اور کریمۂ اہل بیت کے القاب سے معروف ہیں ۔

والد بزرگوارحضرت امام موسی کاظم ؑاور والدہ گرامی روایات کی روسے وہی حضرت امام رضاؑکی والدہ گرامی ہیں۔ مورّخین نے حضرت معصومہ کی ولادت

با سعادت کی صحیح تاریخ یکم ذیقدہ الحرام ۱۷۳ھ ق قمری (مدینہ منوّرہ) لکھی ہے اس بزرگوار خاتون نے ایسے ماحول میں پرورش پائی جس میں تمام اخلاقی فضائل موجودتھے۔ عصمت وعفت اور علم وحکمت اس خاندان کی نمایاں صفات شمار ہوتی ہیں۔حضرت معصومہ (ع) کی اخلاقی اور علمی خصوصیات کی بنا پر علمائے دین اس امر کے معتقد ہیں کہ حضرت امام موسی کاظم ؑ کی اولاد میں حضرت امام رضاؑکے بعد کوئی ایک بھی حضرت معصومہ کا ہم مرتبہ نہیں ہے۔ حضرت معصومہ (ع) اس قدر متقی و پرہیزکار تھیں کہ حضرت ؑ کی زیارت میں نقل ہوا ہے: ‘‘السلام علیک ایتھاالطاھرۃالحمیدۃ الکبری الرشیدۃ التّقیّۃ النّقیّۃ المرضیّۃ ’’ اس مقدس بی بی کےمزید فضائل میں شفاعت کرنے کا رتبہ و مقام ہے ۔لہٰذا روایات اور دینی آثار میں حضرتؑ کےشفیعہ ہونے کو واضح طور پر بیان کیا گیا ہے ۔ حضرت امام صادقؑ فرماتے ہیں:حضرت(فاطمہ معصومہؑ)کی شفاعت کی برکت سے میرے تمام شیعہ جنّت میں داخل ہوجائیں گے۔حضرت معصومہ ؑ اپنے مہربان بھائی کی پناہ و سرپرستی میں زندگی بسر کر رہی تھیں، حضرت ؑکی مدینہ سےہجرت اور خراسان میں مقیم ہو جانے کے بعد حضرت کی ہمشیرہ گرامی اپنے مہربان بھائی کے دیدار وزیارت کے لیے مدینہ سے مروکی راہی ہوگئیں لیکن راستے میں ہی قم میں داخل ہونے کے بعد ۱۷ دن بیمار رہنے کےبعد جہان جاودانی کو سفر کر گئیں۔ حضرت معصومہؑ کے پیکراقدس کو تشییع کرنے کے بعدنہایت عزت و احترام کے ساتھ بابلان میں دفن کردیاگیا۔

Submit to DeliciousSubmit to DiggSubmit to FacebookSubmit to Google PlusSubmit to StumbleuponSubmit to TechnoratiSubmit to TwitterSubmit to LinkedIn