جمعرات, 19 مئی 2022

تازه‌ ترین عناوین

آمار سایت

مہمان
1063
مضامین
472
ویب روابط
6
مضامین منظر کے معائنے
693712

جمعہ کی نماز صبح کی طرح دو رکعت ھے ۔ اس میں اور صبح کی نماز میں فرق یہ ھے کہ اس نماز سے پھلے دو خطبے بھی ھیں ۔ جمعہ کی نماز، واجب تخیری ھے ۔ اس سے مراد یہ ھے کہ جمعہ کے دن مکلف کو اختیار ھے کہ اگر نماز جمعہ کی شرائط موجود ھوں تو جمعہ کی نماز پڑھے یا ظھر کی نماز پڑھے ۔ لھذا اگر انسان جمعہ کی نماز پڑھے تو وہ ظھر کی نما ز کی کفایت کرتی ھے ( یعنی پھر ظھر کی نماز پڑھنا ضروری نھیں )۔

جب جمعہ کی ایک ایسی نماز قائم ھو جو شرائط کو پورا کرتی ھو اور نماز قائم کرنے والا، امام وقت یا اس کا نائب ھو تو اس صورت میں نماز جمعہ کے لئے حاضر ھونا واجب ھے اور اس صورت کے علاوہ حاضر ھونا واجب نھیں ھے ۔ پھلی صورت میں حاضری کے وجوب کے لئے چند چیزیں معتبر ھیں :

( ۱) مکلف مرد ھو ۔ جمعہ کی نماز میں عورتوں کے لئے حاضر ھونا  واجب نھیں ھے ۔

(۲) آزاد ھونا ۔ لھذا غلاموں کے لئے جمعہ کی نماز میں حاضر ھونا واجب نھیں ھے ۔

(۳) مقیم ھونا ۔ لھذا مسافر کے لئے جمعہ کی نماز میںحاضر ھونا واجب نھیں ھے ۔

(۴) بیمار اور اندھا نہ ھونا ۔

(۵) بوڑھا نہ ھونا ۔

(۶) یہ کہ خود انسان کے اور اس جگہ کے درمیان جھاں جمعہ کی نماز قائم ھو دو فرسخ سے زیادہ فاصلہ نہ ھو اور جو شخص دو فرسخ کے سرے پر ھو اس کے لئے حاضر ھونا واجب ھے ۔


مندرجہ ذیل احکام وہ ھیں جن کا تعلق نماز جمعہ سے ھے :

(۱) جس شخص سے جمعہ کی نماز ساقط ھو گئی ھو اور اس کا اس نماز میں حاضر ھونا واجب نہ ھو اس کے لئے جائز ھے کہ ظھر کی نماز اول وقت میں ادا کرنے کے لئے جلدی کرے ۔

(۲) امام کے خطبے کے دوران باتیں کرنا مکروہ ھے لیکن اگر باتوں کی وجہ سے خطبہ سننے میں رکاوٹ ھو تو احتیاط کی بناء پر باتیں کرنا جائز نھیں ھے ۔

(۳ ) احتیاط کی بنا پر دونوں خطبوں کا توجہ سے سننا واجب ھے۔

(۴) جمعہ کے دن کی دوسری اذان بدعت ھے اور یہ وھی اذان ھے جسے عام طور پر تیسری اذان کھا جاتا ھے ۔

(۵ ) ظاھر یہ ھے کہ جب امام جمعہ خطبہ پڑہ رھا ھو تو حاضر ھونا واجب نھیں ھے ۔

(۶) جب جمعہ کی نماز کے لئے اذان دی جا رھی ھو تو خرید و فروخت اس صورت میں جب کہ وہ نماز میں مانع ھو حرام ھے اور اگر ایسا نہ ھو تو پھر حرام نھیں ھے اور اظھر یہ ھے کہ خرید و فروخت حرام ھونے کی صورت میں بھی معاملہ باطل نھیں ھوتا ۔

(۷) اگر کسی شخص پر جمعہ کی نماز میں حاضر ھونا واجب ھو اور وہ اس نماز کو ترک کرے اور ظھر کی نماز بجالائے تو اظھر یہ ھے کہ اس کی نماز صحیح ھو گی ۔

http://www.al-hadj.com

Submit to DeliciousSubmit to DiggSubmit to FacebookSubmit to Google PlusSubmit to StumbleuponSubmit to TechnoratiSubmit to TwitterSubmit to LinkedIn